Documentary

Khamiso Khan Documentary – 100% Free, Biography in Urdu Language

Khamiso Khan introduced Sindhi Kafiyon-Sindhi Kalam in Algoza Music. Khamiso Khan’s Algoza Saaz Sindhi Kalam is still popular in Sindh, Punjab, Rajasthan, and abroad, in rural areas of Sindh. Which are used in classical music.

Khamiso Khan- Complete Documentary

It is commonly used as folk music. And Punjabi folk singers like it as traditional music. Used to play Jagni, Jund Mahi and Mirza.

Khamiso Khan Documentary- 100% Free, Biography in Urdu Language

 

Khamiso Khan Documentary and he was born in 1923 in Tando Muhammad Khan, Hyderabad, Sindh. He learned his art from Ustad Syed Ahmad Shah. 

Algoza instrument is commonly used as an instrumental song in Punjab and Sindh provinces. Ustad Khamisu Khan introduced Algoza to the world. This is a pair of wooden flutes.

It is also a popular choice among British musicians in Rajasthan to make modern bhangra music and personalities an important tool.

Khamiso Khan was a legendary Algoza music artist. He sang Sindhi Kafi, Kalam in Algoza, and made a name for himself in Sindhi music. Ustad Khamiso Khan was very popular in Algoza. This great artist passed away on March 8, 1983, in his hometown Tando Muhammad Khan Sindh with his real creator. And may Allah forgive you.

Algoza instruments are a type of music that is commonly heard and sung in Sindh and Rajasthan. It is very popular in Sindh, Punjab, and Balochistan. And it was invented by Khamiso Khan.

Algoza instruments are characterized by the quality, musicality, and regularity of a particular entertainer. It is known worldwide as the Algoza Instrument.

Also Like: Documentary Ustad Nusrat Fateh Ali Khan, Documentary Ali Muhammad Taji

An important part of the great Woodwind musical instrumental songs. Algoza music is a very difficult and rigorous instrument for playing songs. It consists of a pair of two Wood Wind channels. One mile and one small is a family device.

A selection of lyrics sung by Ustad Khamiso Khan on the most popular Algoza. You can easily download it from our website Media Music Mania with just one click.

The words are sung in the Sindhi language by Algoza Sindhi Saaz. And the poetry of Hazrat Shah Abdul Latif Bhattai (may Allah have mercy on him) and other famous poets of Sindh. 

Like Hazrat Sachal Sarmast (may Allah have mercy on him) and also the words of many Sufi poets.

Khamiso Khan - 100% Free Algoza Sindhi [Biography, Documentary]

Paduthambi or Jodia Pava which is called in Gujarati, Kachhi. And it is a pair of wooden instruments adopted by the artists of Punjabi, Sindhi, Kachhi, Rajasthani, and Baloch people.

History of Algoza Music- Khamiso Khan Documentary

Similarly, he was jailed. Pava is called Jury, Double Groove, Donal, Grave, Star, or Nagoz. It includes two jointed softwood winds. One for lyrics, the other for automation.

Two wooden winds from Algoza at once. It is a pity that the rapid resumption of breath on each beat. Makes swinging music and also read Khamiso Khan Documentary.

The wooden instrument used to have two woodwind funnels of the same length. However, after some time one of them was reserved for sound purposes. Algoza music can be extended to any song. It is used in traditional and folk music of Punjab.

It has also become a popular instrument in Punjabi “combination” and bhangra music. It is an important musical instrument in Rajasthani and Baloch society and listens Khamiso Khan Documentary.

The best examples of Algoza instruments. Sindhi artist late Ustad Khamiso Khan. The late Ustad Misri Khan Jamali. And Akbar Khamiso Khan is very famous.

Garmeet Bawa is a great singer of Punjabi society who uses this instrument. Musa Gulmjat and Noor Mohammad Sodha are definitely great Pava artists and Khamiso Khan Documentary.

The Algoza instrument adopted by Sindhi Rajasthani and Baloch folk musicians is also called “Jury”, “Do Nali”, “Satara or Ngozi”. It is like a wooden flute and algoza music singer Khamiso Khan Documentary.

The musician plays it using three fingers on each side. It produces sound through rapid breathing. And the rapid recovery of breath on each beat produces a bouncing, swinging rhythm and also read Khamiso Khan Documentary. 

Free Download 100% Free Algoza Music of Khamiso Khan from our Website Media Music Mania.

 

 استاد خمیسو خان ​​نے  الگوزا      میوزک میں سندھی کافیوں۔سندھی کلام  کو متعارف کروایا۔ خمیسو خان ​​کے الگوزا       ساز  سندھی کلام  آج بھی سندھ ، پنجاب،  راجستان۔بیرون ممالک ، سندھ کے دیہی علاقوں میں مقبول ہیں۔ جو کلاسیکی موسیقی میں استعمال ہوتے ہیں۔

اسے عام طور پر لوک ساز موسیقی کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے ۔اور پنجابی لوک گلوکار اسے روایتی موسیقی جیسے۔ جگنی، جند ماہی اور مرزا  بجانے کے لیے استعمال کرتے ہیں۔ 

استاد خمیسو خان ​​ انی سو23  میں ٹنڈو محمد خان، حیدرآباد سندھ میں پیدا ہوئے ۔انہوں نے اپنا الگوزا      فن استاد سید احمد شاہ سے سیکھا۔ الگوزا      ساز عام طور پر پنجاب اور سندھ صوبوں میں ایک ساز گانے کے طور پر استعمال ہوتا ہے۔ استاد خمیسو خان ​​نے الگوزا       کو دنیا بھر میں متعارف کرایا۔ یہ لکڑی کی بانسری کا جوڑا ہے۔ 

یہ راجستان میں عصری بھنگڑا موسیقی اور شخصیات کو ایک اہم آلے کے طور پر بنانے کے لیے برطانیہ کے موسیقاروں میں بھی ایک مقبول انتخاب ہے۔ 

  استاد خمیسو خان  ایک  لیجنڈری  الگوزا       میوزک آرٹسٹ تھے۔ انہوں نے           الگوزا      میں سندھی کافی، کلام گایا اور سندھی موسیقی میں ایک بڑا نام پیدا کیا۔ استاد خمیسو خان ​​ الگوزا       میں بہت مقبول تھے۔  یہ عظیم فنکار 8 مارچ   انی سو تیراسی) کو اپنے آبائی شہر ٹنڈو محمد خان سندھ    میں  اپنے  خالق حقیقی سے جا ملے ۔اور اللہ تعالیٰ آپ کی مغفرت فرمائے آمین۔ 

  الگوزا       یہ ایک ایسی موسیقی ہے جو عام طور پر  سندہ اور راجستان  میں  سنی اور گائی جاتی ہے۔ سندھ، پنجاب، بلوچستان  میں بہت مشہور ہے۔ا  ور    یہ  استاد خمیسو خان ​​کی ایجاد تھی۔

  الگوزا       ساز میں قابلیت، موسیقیت، اور باقاعدگی سے کسی مخصوص تفریح ​​کنندہ کی خوبی کی خصوصیات ہوتی ہے۔ یہ دنیا بھر میں   الگوزا       انسٹرومینٹ کے نام سے جانا جاتا ہے ۔ 

جو زبردست ووڈ  ونڈ میوزک انسٹرومینٹل گانوں کا ایک اہم حصہ ہے۔  الگوزا       گانے بجانے کے لیے ایک بہت ہی مشکل اور سخت آلہ ہے ۔جس میں دو ووڈ وِنڈ چینلز ایک جوڑے  میں شامل ہوتے ہیں۔  جو ایک  میل اور چھوٹا ایک فیمیل  آلہ ہوتا ہے۔ 

استاد خمیسو خان ​​کے گائے ہوئے مقبول ترین   الگوزا       پر گائے ہوئے کلام  کا انتخاب ۔آپ ہماری ویب سائیٹ Media Music Mania  سے بڑی آسانی سے صرف ایک کلک سے ڈاؤن لوڈ کر سکتے ہیں۔ 

 کلام الگوزا       سازکے ذریعے  سندھی زبان میں گائے گئے ہیں۔ اور حضرت شاہ عبداللطیف بھٹائی رحمۃ اللہ علیہ کی شاعری اور سندھ کے دیگر مشہور شاعر۔ جیسے حضرت سچل سرمست رحمتہ اللہ علیہ ۔اور بھی بہت سارے صوفی شاعروں کے کلام بھی شامل ہیں۔ 

پڈوتھمبی یا جوڑیا پاوا جسے گجراتی، کچھی میں کہا جاتا ہے ۔اور یہ پنجابی، سندھی، کچھی، راجستھانی اور بلوچ لوگوں کے فنکاروں کے ذریعے اپنائے جانے والے لکڑی کے آلات کا ایک جوڑا ہے۔ 

اسی طرح اسے مٹیان جوری۔ پاوا جوری، دو نالی، ڈونل، گراو، ستارہ یا ناگوز کہا جاتا ہے۔ اس میں دو جوائنڈ اسنوٹ ووڈ ونڈز شامل ہیں۔ ایک دھن کے لیے، دوسرا آٹومیٹن کے لیے۔ 

  الگوزا       سے ایک ساتھ دو لکڑی کی ہوائیں۔ ہر ایک تھاپ پر سانسوں کا تیزی سے بحال ہونا ایک رقت آمیز۔ جھومتی ہوئی موسیقی بناتی ہے۔ 

لکڑی کے آلے میں پہلے ایک جیسی لمبائی کے دو ووڈ ونڈ فنل ہوتے تھے ۔تاہم کچھ عرصے بعد ان میں سے ایک کو صوتی مقاصد کے لیے مختص کیا گیا۔ 

ا لگوزا       کی موسیقی کو کسی بھی گانے تک بڑھایا جا سکتا ہے۔ اسے پنجاب کی روایتی اور عوامی موسیقی میں استعمال کیا جاتا ہے۔

یہ پنجابی کے “کمبی نیشن” اور بھنگڑا میوزک میں بھی ایک معروف ساز  بن گیا ہے۔ یہ راجستھانی اور بلوچ معاشرے کی موسیقی کا ایک اہم آلہ ہے۔ 

الگوزا        ساز کی بہترین مثالیں۔ سندھی فنکار مرحوم استاد خمیسو خان۔ مرحوم استاد مصری خان جمالی۔  اور اکبر خمیسو خان  بڑے مشہور  ​​ہیں۔ 

گرمیت باوا پنجابی معاشرے کا ایک شاندار گلوکار ہے جو اس آلے کو استعمال کرتا ہے۔ موسیٰ گلمجت اور نور محمد سوڈھا یقیناً  بہت بڑے  پاوا فنکار ہیں۔ 

  الگوزا       ساز جسے سندھی راجستانی اور بلوچ لوک موسیقاروں نے اپنایا ہے اسے “جوری”، “دو نالی”، “ستارا یا نگوزی” بھی کہا جاتا ہے۔ یہ لکڑی کی بانسری کے برابر ہے۔ 

 موسیقار اسے ہر طرف تین انگلیوں کا استعمال کرتے ہوئے بجاتا ہے۔ اس میں تیزی سے سانس لینے سے آواز پیدا ہوتی ہے۔ اور ہر دھڑکن پر سانس کو تیزی سے دوبارہ حاصل کرنے سے ایک اچھالتی، جھولتی تال پیدا ہوتی ہے۔

  

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button