Documentary

Mai Bhagi Documentary – Biography, 100% Best Urdu & English Language

Mai Bhagi Documentary and is a Singer of Sindhi Folk Songs was born in 1920 in Diplo Tharparkar. Her real name was Bhagiri. Her father’s name was Vanhyal  Faqir and her mother’s name was Khadija. She was also a singer. She was married at the age of 16 in Islamkot, Sindh. Her husband’s name was Hothi Faqir.
 

Mai Bhagi Documentary - Biography, 100% Best Urdu & English LanguageMai Mai Bhagi moved to Mithi Tharparkar in 1950 and took up her permanent residence there. She was first introduced to Radio Pakistan Hyderabad in 1960 by producer Ghulam Hussain Sheikh.

Mai Bhagi Documentary and Complete Biography

She started singing on Radio Pakistan in 1960. Abdul Kareem Baloch, the producer of Pakistan Television, introduced her to PTV, and there she sang very good folk songs and received accolades.

She sang Sindhi Sehras at weddings and other celebrations in various villages and other localities of Thar. Mai Bhagi won the Pride of Performance and other important Sindhi awards and was called “Thar Ji Koil”. She was a great artist of Sindh and also read Mai Bhagi Documentary.

You Also Like: Documentary Muhammad Ibrahim, Documentary Dhol Faqeer

Sindhi folk music singer Mai Bhagi was very popular all over Sindh and Tharparkar. She also sang Sindhi songs, including Sindhi folk songs, Sindhi old classical, and all popular audio songs. Great Sindhi Old Sehra songs in stylish, because folk songs are still very popular in Sindh and are sung.

 Mai Bhagi was the most popular singer of Sindhi folk music and she made a name for herself in Sindhi music. Her most popular song “Charmi Ro Bilal Sa” became very popular on Radio Pakistan. She belonged to a very poor family. She sang Sindhi folk songs on different occasions.

The history of Sindhi folk songs is very old. In Sindh, women gather at open parties and sing wedding songs and folk songs and also read Mai Bhagi Documentary.

Mai Bhagi most famous Sindhi Classical Music

Mai Bhagi sang many great songs in the history of Sindhi classical music, some of which became very popular:

  • Khari Neem Ke Neche
  • Aayal Mohinjo Barocho
  • Jeejal Mohinji Qismat
  • Bhit Ja Bhittai, Bhitt te Wasai
  • Murali Wari Man Mohiyo
  • Saman Sai Maa Ta Goli Ghulam
  • Mohija Pakhi Padehira

Music from the Sindh region is sung in Sindhi, and most of it is sung in either “Snares” or “Waee style”. Beth’s style of folk music is in the soft song or graham. Wai instrumental music is performed in a variety of ways using string instruments. Wai, otherwise Sindhi is called Kafi, and Sindhi songs are sung by other singers like Mai Bhagi.

 Kalam and mystical kalam are sung in Balochistan, Punjab, and some parts of Rajasthan. Hazrat Shah Abdul Latif Bhattai, may God have mercy on him.

 Dr. Nabi Bakhsh Baloch is one of the most famous personalities of the Sindhi language. He has given a great name to Sindhi culture, language, history, and Mai Bhagi Documentary.

 Sindhi songs are very famous and popular in Sindh, including popular songs, “Sindh Mohinj Amaan”, and “Perchan Shaal Panwar Dholia Maro Moo San” and also listen in Urdu Mai Bhagi Documentary.

 Sindhi old-style music is included in the songs of Sindh classical and is celebrated in India and Sindh region in old traditional times and different periods.

 Its central principles were set out exclusively in the realm of 1550 and 1900, known as the time of common practice and the sarcastic history of the time when traditional music was sung by singers.

 Artists who have comprehensively considered traditional music are said to have “customized it. This arrangement can begin with the private activities of the instrument or sound teachers or at a studio, school, or Completion of a typical program offered by the school in the old days and also listen Mai Bhagi Documentary.

 In the Sindh region, a few classical music teachers taught traditional music to youth in “Yektaro and Chapri”. Shah Jo Risalo, “Sir”, especially the traditional Bhervi, Sasi, and Momal Rano were sung in the old and new styles. 

 A large number of artists, for example, Ustad Manzoor Ali Khan, Mai Bhagi, Fauzia Soomro, Jalal Chandio, Muhammad Ibrahim, and Muhammad Jaman are very big names in Sindh classical music. This great Sindhi folk Music Artist passed away on July 7, 1986.

History of Mai Bhagi

مائی بھاگی سندھی لوک گیتوں کی گلوکارہ  1920 میں ڈیپلو تھرپارکر سندھ میں پیدا ہوئیں، ان کا اصل نام بھاگیری تھا۔ ان کے والد کا نام ونہیل فقیر تھا اور ان کی والدہ کا نام خدیجہ تھا وہ  بھی گلوکارہ تھیں، ان کی شادی اسلام کوٹ سندھ میں 16 سال کی عمر میں ہوئی تھی اس کے شوہر کا نام ہوتھی فقیر تھا ۔

 

 مائی بھاگی 1950 میں مٹھی تھرپارکر منتقل ہوئی اور وہاں پر ہی آپ نے اپنی مستقل رہائش اختیار کی ، انہیں پروڈیوسر  غلام حسین  شیخ نے  پہلی بار  1960 میں ریڈیو پاکستان حیدرآباد  میں متعارف کرایا،۔ انہوں نے 1960 میں ریڈیو پاکستان پر گانا شروع کیا۔ پاکستان ٹیلی ویژن  کے پروڈیوسر عبدالکریم بلوچ نے آپ کو پی ٹی وی پر متعارف کرایا، اور وہاں پر آپ  نےخوب اچھے لوک گیت گائے اور داد حاصل کی۔

 

 انہوں نے تھر کے مختلف دیہاتوں اور دیگر مقامی علاقوں میں شادیوں اور دیگر تقریبات میں سندھی سحرے گائے ۔ مائی بھاگی نے پرائیڈ آف پرفارمنس اور دیگر اہم سندھی ایوارڈز جیتے اور انہیں “تھر جی کوئل” کہا جاتا تھا۔ وہ سندھ کی ایک عظیم فنکارہ تھیں۔

 

 سندھی فوک میوزک گلوکارہ مائی بھاگی پورے سندھ اور تھرپارکر میں بہت مقبول تھیں، انہوں نے سندھی گانے بھی گائے، ، سندھی لوک گیت، سندھی پرانے کلاسیکل، اور تمام مشہور آڈیو گانے شامل ہیں۔مائی بھاگی نے شادی کی تقریب میں پرانے وقتوں میں نئے اسٹائلش میں زبردست سندھی اولڈ سحر ے گائے ، ، کیونکہ لوک گیت آج بھی سندھ  میں بہت مشہور ہیں گائے اور سنے جاتے  ہیں۔

 

 مائی بھاگی، سندھی لوک موسیقی کی مقبول ترین گلوکارہ تھیں اور انہوں نے سندھی موسیقی میں بڑا نام پیدا کیا ۔ ریڈیو پاکستان پر ان کا سب سے مقبول گیت  “چرمی رو بلال سا” بہت مقبول ہوا۔ وہ ایک انتہائی غریب گھرانے سے تعلق رکھتی  تھیں اس نے مختلف مواقع پر سندھی لوک گیت گائے۔

 

 سندھی لوک گیت کی تاریخ بہت پرانی ہے، سندھ میں خواتین کھلی محفلوں میں اکٹھی ہوتی ہیں اور شادی کے  سحرے  اور لوک گیت گاتی ہیں، اس وقت مائی بھاگی نے بھی اپنی میٹھی آواز کے ساتھ اسٹائلش زبردست گانے گائے تھے اور ابھی تک آپ سن سکتے ہیں۔

 

ڈاکٹر نبی بخش بلوچ، سندھی زبان کے سب سے نامور شخصیت ہیں ، اس نے سندھی  ثقافت، زبان اور تاریخ  کو بہت خوب اور بڑا رنگ  دیا ہے، اس نے  اپنی  32 سال کی تحقیق کو اکٹھا کیا ہے۔ سندھی گانے سندھ میں بہت سریلی اور مشہور ہیں، جن میں مشہور گانے شامل ہیں، “سندھ  مھنجی  اماں”، “پرچن شال پنوار ڈھولا مارو مو سان”۔

 

 مائی بھاگی کے تاریخی سندھی گانے اور سندھ میں کلاسیکی موسیقی کے بارے  کردار۔

 

سندھی پرانی طرز کی موسیقی جو سندھ کے معاشرے کی دھنوں میں شامل ہوتی ہے اور ہندوستان اور سندھ کے علاقے میں پرانے روایتی وقت اور مختلف ادوار میں منائی جاتی ہے۔ اس کے مرکزی اصولوں کو خصوصی طور پر 1550 اور 1900 کے دائرہ کار میں کسی جگہ ترتیب دیا گیا تھا، جسے عام مشق کے وقت اور اس وقت کی سریلی تاریخ کے طور پر جانا جاتا ہے جہاں روایتی موسیقی گلوکاروں کے ذریعہ گایا جاتا تھا۔

 

وہ فنکار جنہوں نے روایتی موسیقی پر جامع انداز میں غور کیا ہے، کہا جاتا ہے کہ وہ “اپنی مرضی کے مطابق ترتیب دیے گئے۔ یہ انتظام آلہ یا آواز کے اساتذہ کی نجی سرگرمیوں سے شروع ہو سکتا ہے یا کسی سٹوڈیو،ا سکول یا پرانے زمانے میں سکول کی طرف سے پیش کردہ ایک عام پروگرام کی تکمیل ہے۔

 

سندھ کے علاقے میں، کلاسیکی موسیقی کے چند اساتذہ نے یکتارو اور چھپری میں نوجوانوں کو روایتی موسیقی سکھائی ۔ شاہ جو رسالو، “سر”، خاص طور پر روایتی بھیروی، سسی، مومل رانو کو پرانے اور نئے انداز کے ساتھ گایا جاتا تھا۔ فنکاروں کی ایک بڑی تعداد، مثال کے طور پر، استاد منظور علی خان، مائی بھاگی، فوزیہ سومرو، جلال چانڈیو، محمد ابراہیم، محمد جمن کلاسیکی موسیقی سندھ کے بہت بڑے نام ہیں ،۔سندھی  لوک گیت کی یہ  عظیم فنکارہ 7 جولائی 1986 کو اپنے خالق حقیقی سے جا ملی۔

 

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button