Muhammad Ibrahim Biography – Documentary, 100% Best English & Urdu Language

 

Muhammad Ibrahim Biography is the best artist of Sindhi and he has sung a lot of great songs he was born on June 13, 1920, in Salaya, Gujarat. At the age of 21, he moved to Karachi from Gujarat in 1942 and settled there. He started singing on Radio Pakistan Hyderabad in 1955. 

You Also Like: Documentary Mai Bhagi, Documentary Dhol Faqeer
 
He played a new role in Sindhi music. He was one of the most popular artists of Radio Pakistan Hyderabad.

He joined Radio Pakistan Karachi in 1948. Later in 1955, he moved to Hyderabad, Pakistan as a music composer and also listen to Urdu Muhammad Ibrahim Biography.

Ustad Muhammad Ibrahim, Ustad Manzoor Ali Khan, Ustad Muhammad Jaman, and Master Muhammad Ibrahim revolutionized Sindhi music by setting new trends and styles in the early days after the independence of Pakistan in 1947.

Muhammad Ibrahim Biography and Documentary

He made a name for himself in Sindh folk music. Ustad Muhammad Ibrahim started singing in classical technique and his songs are still very popular in Sindhi society also listens to Muhammad Ibrahim Biography.

In 2016, on his 39th birthday, a ceremony was organized at the Arts Council of Pakistan Karachi to pay tribute to him.

At the ceremony, his son claimed that Master Muhammad Ibrahim was one of the artists who sang the first national anthem recorded in Pakistan. The legendary artist Ustad Muhammad Ibrahim, the king of Sindhi classical music, passed away on May 3, 1977.

 

محمد ابراہیم 13 جون 1920 کو سلایا گجرات میں پیدا ہوئے ۔ 21 سال کی عمر  میں   1942میں جرات سے کراچی  شہر منتقل ہوئے ، اور وہاں
رہائش پذیر ہوئے، 1955  سے ریڈیو پاکستان حیدر آباد سے گانا شروع کیا، سندھی موسقی میں نیا کردا ادا کیا وہ ریڈیو پاکستان حیدرآباد کے مقبول ترین فنکار تھے ۔

انہوں نے 1948 میں ریڈیو پاکستان کراچی میں شمولیت اختیار کی۔ بعد ازاں 1955 میں وہ بطور میوزک کمپوزر ریڈیو پاکستان حیدرآباد چلے گئے۔

استاد    محمد ابراہیم نے استاد منظور علی خان، استاد محمد جمن اور ماسٹر محمد ابراہیم نے 1947 میں پاکستان کی آزادی کے بعد ابتدائی دنوں میں نئے رجحانات اور انداز ترتیب دے کر سندھی موسیقی میں انقلاب برپا کیا۔

 انہوں نے سندھ فوک میوزک میں بڑا نام پیدا کیا۔ استاد محمد ابراہیم نے کلاسیکی تکنیک میں گانا شروع کیا اور ان کے گانے آج بھی سندھی معاشرے میں بہت مقبول  ہیں۔

2016 میں، ان کی 39ویں برسی پر، آرٹس کونسل آف پاکستان کراچی میں انہیں خراج عقیدت پیش کرنے کے لیے ایک تقریب کا اہتمام کیا گیا۔

 اس تقریب میں ان کے بیٹے نے دعویٰ کیا کہ ماسٹر محمد ابراہیم ان  فنکاروں  میں سے ایک تھے جنہوں نے پاکستان میں ریکارڈ ہونے والا پہلا قومی ترانہ گایا تھایہ بہت بڑے اعزاز کی بات ہے۔

 سندھی کلاسیکی موسیقی کے  بادشاہ ،  لیجنڈ آرٹسٹ استاد محمد ابراہیم 03 مئی 1977 کو انتقال کر گئے۔

Exit mobile version